…امر لمحہ… اجنبی سی راہوں میں, اس طرح تمہیں ملنا اور پھر بچھڑ جانا

Shaista Mufti Farrukh
==============
امر لمحہ

بارشوں کے موسم میں
اجنبی سی راہوں میں
اس طرح تمہیں ملنا
اور پھر بچھڑ جانا
یاد پھر دلا تا ہے
کہ ابھی گلابوں کی
موتیے کے پھولوں کی
شوخ تتلیوں جیسی رت ابھی بھی باقی ہے
روح کے سفر میں ہم
مل چکے ہیں پہلے بھی
ماہ و سال کی گردش پاس لے کے آئی تھی
اور پھر یہی گردش دور لے گئی ہم کو
زندگی کے سرکس میں کون کب ملے ہم سے
کون دور جاتا ہے
بس یہی وہ لمحہ تھا
جو امر تھا پہلے بھی
اور اب بھی ہے شاید

شائستہ مفتی
Amar lamha

Barishon k mausam me
Ajnabi si raahoon me
Is tarah tumhain milna
Aur phir bichar Jana
Yaad phir dilata hai
K abhi gulaboon ki
Motiay k phoolon ki
Shooqh titlion jaisi rut abhi bhi baqi hai
Rooh k safar me hum
Mil chukay hain pehlay bhi
Maah o saal ki gerdish paas le ke aaie thi
Aur phir yehi girdish dor le gaie hum ko
Zindagi k circus me kon kab milay hum we
Kon dor jata hai
Bus yehi woh lamha tha
Jo amar tha pehlay bhi
Aur ab bhi hai shayed

Shaista Mufti مفتی