گوشہ گیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Nighat Nasim – Sydney, Australia
=========


گوشہ گیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنو ۔۔!
خفا نا ہونا
کچھ تاخیر سے
تمہیں خط کا جواب لکھ رہی ہوں
ان دنوں
گوشہ گیر ہوں
لاکھوں برس کا ڈھیر پڑا ہے
اور۔۔ میں
وہ منظر چن رہی ہوں
جو کبھی جیئے نہیں تھے
وہ آوازیں سن رہی ہوں
جو کبھی سنیں نہیں تھیں
یوں سمجھو اپنی ہمزاد ہو گئی ہوں
تم بھی سوچو گے
میں بھی بھلا کیا کام لے بیٹھی ہوں
پر ۔۔۔ تم ہی کہو
بار بار ایک جیسا سفر کب تک ہو
لاکھوں برس کی ہزاروں آوازیں ہیں
اور میں ۔۔ گوشہ گیر
اپنے لئے کتاب لکھ رہی ہوں
ہر نئے پل میں نئی ہو رہی ہوں
جانے اب کب خط لکھنا ہو ۔۔!
اپنا بہت خیال رکھنا
اور ۔۔۔ ہاں
سنو ۔۔!
درخت کی طرح ہر سمت مت رہنا
خدا حافظ ۔۔!

ڈاکٹر نگہت نسیم