دل یوں دھڑکا کہ پریشان ہوا ہو جیسے

Zaib Nisa
========
دل یوں دھڑکا کہ پریشان ہوا ہو جیسے
کوئی بے دھیانی میں نقصان ہوا ہو جیسے

رخ بدلتا ہوں تو شہ رگ میں چبھن ہوتی ہے
عشق بھی جنگ کا میدان ہوا ہو جیسے

جسم یوں لمس رفاقت کے اثر سے نکلا
دوسرے دور کا سامان ہوا ہو جیسے

دل نے یوں پھر میرے سینے میں فقیری رکھ دی
ٹوٹ کر خود ہی پشیمان ہوا ہو جیسے

تھام کر ہاتھ میرا ایسے وہ رویا
کوئی کافر سے مسلمان ہوا ہو جیسے….

Dil Youn Dharka keh Pareeagan Hua Ho Jese
Koi Be Dhayani Main Nuqsan Hua Ho Jese

Rukh Badalta Hoon To She Rag Main Chubhan Hoti Hy
Ishq Bhi Jang Ka Maidan Hua Ho Jese

Jisam Youn Lamas_E_Rafaqat Ke asar Se Nikla
Dusare Dour Ka Saman Hua Ho Jese

Dil Ne Youn Phir Mere Seene Main Daqeeri Rakh Di
Toot Kar Khud Hi Pasheeman Hua Ho Jese

Tham Kar Hath Mera Woh Roya Aese
Koi Kafir Se Musalman Hua Ho Jese…..