سچی حکایات *🐐بکــــری زنـــــدہ ہـــــوگئـــی ــ🐐*

*جنگِ احضراب میں حضرت جابر رضی اللہ عنہ نے حضور سرور عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی دعوت کی اور ایک بکری ذبح کی،حضور جب صحابہ کرام کی معیت میں جابر کے گھر پہنچے تو جابر نے کھانا لا کر آگے رکھا،تھانہ تھوڑا تھا اور کھانے والے زیادہ تھے،حضور نے فرمایا تھوڑے تھوڑے آدمی آتے جاؤ اور باری باری کھانا کھاتے جاؤ،چنانچہ ایسا ہی ہوا کہ جتنے آدمی کھانا کھا لیتے وہ نکل جاتے،اسی طرح ہم سب نے کھانا کھا لیا،جابر فرماتے ہیں کہ حضور نے پہلے ہی فرما دیا تھا کہ کوئی شخص گوشت کی ہڈی نہ توڑے،نہ پھینکے،سب ایک جگہ رکھتے جائیں جب سب کھا چکے تو آپ نے حکم دیا کہ چھوٹی موٹی سب ہڈیاں جمع کردو،جمع ہوگئیں تو آپ نے اپنا دست مبارک ان پر رکھ کر کچھ پڑھا آپ کا دست مبارک ابھی ہڈیوں کے اوپر ہی تھا اور زبان مبارک سے آپ کچھ پڑھ ہی رہے تھے کہ وہ ہڈیاں کچھ کا کچھ بننے لگیں،یہاں تک کہ گوشت پوست تیار ہو کر کان جھاڑتی ہوئی وہ بکری اٹھ کھڑی ہوئی، حضور نے فرمایا:۔*
*جابر! لے یہ اپنی بکری لے جا_”*
(دلائل النبوۃ جلد ۲صفحہ۲۲۴)

*🏷سبـــــــــــــــــــق🏷*
*ہمارے حضور صلی اللہ علیہ وسلم منبع الحیات اور حیات بخش ہیں،آپ نےمردہ دلوں اور مردہ جسموں کو بھی زندہ فرما دیا پھر جو لوگ (معاذاللہ)حضور کو ”مر کر مٹی میں ملنے والا“ کہتے ہیں کس قدر جاھل اور بے دین ہیں ــ*

*_📔 (سچی حکایات )_*

*🌹؛واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب؛🌹*
‌‏ ◆‐‐‐‐‐‐‐‐‐‐‐••✦•✿ ✿•✦••‐‐‐‐‐‐‐‐‐‐‐‐◆