شوہر کو جو زباں ملے ۔۔۔۔

Zaara Mazhar_PAKISTAN
===========
آ پ کی توند بہت نکل رہی ہے ۔۔۔عجیب بے ڈول جسم ہے ہر پیمانے سے باہر نکل گیا ہے سولہ انچ کالر میں شولڈر اور آ سینیں لٹکنے لگتی ہیں ساڑھے پندرہ میں تو صورتحال بالکل سمجھ نہیں آ تی اور پندرہ میں توند تربوز کی طرح دکھتی ہے بٹن بند ہوکے نہیں دیتے ۔۔۔ حد ہے لاپروائی کی ۔۔۔ جِم جایا کیجیئے ۔۔۔ بیوی نے تیسری بار صا حب کی شرٹس دکاندار کو واپس کیں تو اس کا ضبط جواب دے گیا ۔۔۔
محترم بہت دن تو شرمندہ سی خاموشی سے سنتے رہے پھر ایک روز کافی غور و غوض کے بعد اچانک بول پڑے ۔۔۔ آ پ جو ٹیلر کے پاس چھتیس بار جاتی ہیں کہیں سے کم کہیں سے زیادہ کروانے کو ۔۔ مجال ہے ایک بار کے سلے کپڑے آ پ کو پورے یا پسند ا جائیں ۔۔۔اسی لیئے ریڈی میڈ لے نہیں سکتیں ۔ چکر تو مجھے ہی لگانے پڑتے ہیں آ پکے پیمانے بھی بگڑ چکے ہیں ہنہہ ۔۔۔
بیوی گُپ ، چُپ ، ساکت ۔۔

( میرے نئے افسانے سے اقتباس )