گلزار کی نظم سا آ دمی ۔۔۔

Zaara Mazhar_Pakistan, Chashma
========
گلزار کی نظم سا آ دمی ۔۔۔

کل ایک رومان انگیز شام تھی
موسم کی خنکی کمرے میں بھی در آ ئی ۔۔۔
سیٹی پر نیم دراز میں نے ٹانگوں پر کمبل ڈال دیا
کافی کی تلخی حرارت بخش تھی ۔۔۔
میرے ہاتھوں میں گلزار کی نظمیں دھڑکنے لگیں ۔۔
میں نے ہیٹر پہ نظر جما دی
اور ہیٹر آ تشدان ہوگیا ۔۔
لکڑیاں چٹخنے کی آ واز ۔۔۔
اور راکھ کے پھول جگنو کی مانند ۔۔
ادھر ادھر اڑنے لگے ۔۔۔
میں تعاقب میں نکل گئی ۔۔۔۔
باہر ہرے پتے ۔۔۔ موسم کی شدت میں
لال پیلے ہو ہو کے جھڑ رہے تھے ۔۔
کیاری میں چند شوخ گلاب ۔۔۔
خوبصورتی اور خوشبو بکھیر رہے تھے ۔۔۔
بہار کے پھولوں کی پنیری سر اٹھا رہی تھی ۔۔
کہ ٹھٹھری ہوئی چوڑی سرمئی سڑک پر ۔۔۔
دھند میں لپٹا ہوا ۔۔۔
گلزار کی نظموں سا وہ آ دمی ۔۔۔
کتاب سے نکل کر ۔۔
سرد موسم کے سینے سے سورج کی طرح طلوع ہوا ۔۔۔۔
خاموشی سے میرے برابر بیٹھ گیا ۔۔
اور اپنے ہاتھ میں میرا ہاتھ لیکر ۔۔۔
بازو میری پشت پر پھیلا دیا !!!

ز ۔ م
10 نومبر 2018ء