اردو خبریں خاص موضوع

جب مکہ مکرمہ سے رخصت ہونے کا وقت آیا تو قلب کی عجیب کیفیت تھی

AFZAL QASMI AKMAL
·
میرے احباب اور عزیز دوستو اور ساتھیو !
چند برس قبل اللہ نے اس گنہگار کو حج کی سعادت نصیب فرمائی. اس موقع پر جب مکہ مکرمہ سے رخصت ہونے کا وقت آیا تو قلب کی عجیب کیفیت تھی. طوافِ وداع (رخصتی طواف) کر کے جب واپس قیامگاہ کی طرف جا رہا تھا تو کچھ اشعار نوکِ قلم پر آگئے جو میں آپ سب کے سامنے پیش کر رہا ہوں.
چونکہ ان الفاظ میں میری قلبی کیفیات بھی شامل ہیں اس لیے مجھے بہت عزیز ہیں. امید کہ آپ کو بھی پسند آئینگے.

دیوار و در و کوئے صنم ،،،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں
ہم بیتِ کرم ،،،،،، صحنِ حرم ،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

آنا تھا ترا حکم ،،،،،،،،،،،،،،،، تو جانا تری مرضی
گھر تیرا بصد حسرت و غم ،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

اِن عاصی نگاہوں نے بھی ،،، دیکھے ترے جلوے
جلووں میں عیاں ابرِ کرم ،،،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

تھکنے کا مزا ،،،،،،،، دوڑتے پھرنے کی یہ لذت
دزدیدہ نظر ،،،،،، بہکے قدم ،،،،، چھوڑ چلے ہیں

اک پَل میں بہک جانا ،،،،،، اور اک پل میں سنبھلنا
دیوانگی و ہوش بہم ،،،،،،،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

پہلو میں مرے گھر ہے ترا ،،، اور تری چوکھٹ
سرگوشیِ لَا تَقنَطُوا ،،،،،،،،،، ہم چھوڑ چلے ہیں

مہماں کا لقب ،،،، گھر کے غلاموں کو ملا ہے
ہم بارشِ الطاف و کرم ،،،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

پھر لذتِ لبہاے نبی کی ،،،،،،،،،،،، لیے حسرت
ہم بوسہ گہِ شاہِ اُمم ،،،،،،،،،،،، چھوڑ چلے ہیں

یہ شوطِ وِداع ،، جسموں کے جانے کا عمل ہے
دل اپنا یہیں ،،،، تیری قسم ،،،، چھوڑ چلے ہیں

اس عالمِ حسرت کا ،،،،،،،،،، بیاں ہو نہیں سکتا
سمجھے گا کوئی کیسے جو ہم چھوڑ چلے ہیں

اس کیف کو “اکمل” کوئی دیوانہ ،،، لکھے کیا
فرزانے بھی ہاتھوں سے قلم ،، چھوڑ چلے ہیں

افضال قاسمی اکمل

Facebook Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published.