اردو خبریں خاص موضوع

ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻭ – ﺧﻮﺍﮦ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭼﯿﻦ تک ﮬﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ : ﮐﯿﺎ ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﯿﻦ ﮐﻮ ” ﺻﯿﻦ ” ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟

Ashraf Ali

Mumbai, Maharashtra

==============

حدیث علم (ایک علمی پوسٹ)
ارباب علم و دانش کیلیئے خصوصی تحریر –
(غدیر خم)

انا (ص) مدینتہ العلم و علی (ع) بابھا –
فمن اراد العلم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فلیات الباب –

ﻣﯿﮟ (ص) ﻋﻠﻢ ﮐﺎ ﺷﮩﺮ ﮨﻮﮞ – ﺍﻭﺭ ﻋﻠﯽؑ (ع) ﺍسکا ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮨﮯ – اگر علم لینے کا ارادہ ہو ؟ تو در بدر پھرنے کی بجائے علم کے اس در پہ آ جانا – جس در کے تمام انبیاء علیہم السلام بھی سوالی ہیں – اور جس در کے بارے میں امت مسلمہ بھی کہتی نظر آتی ہے کہ :

اے شاہ مدینہ (ص) اور یثرب کے والی (ص)
سارے نبی (ع) تیرے (ص) در (ع) کے سوالی

ﺍﯾﮏ ﯾﮧ ﺣﺪﯾﺚ ﮬﮯ ﺟﻮ ﺍﻭﭘﺮ ﮬﻢ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﯽ ﮬﮯ –
ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭﺣﺪﯾﺚ ہے – ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﯾﻮﮞ ﮬﮯ ۔
ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻭ – ﺧﻮﺍﮦ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭼﯿﻦ تک ﮬﯽ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ –

ﺍﺱ ﺣﺪﯾﺚ ﺷﺮﯾﻒ ﻣﯿﮟ ” ﻟَﻮﮐَﺎﻥَ ﻓﯽ ﺍﻟﺼّﯿﻦ ” ﮐﺎ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﺍُﺭﺩﻭ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﻏﻠﻂ ﮐﯿﺎ ہے – ﺁﭖ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﺮﯾﮟ – عربی لغت چھان ماریں – کیا ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ” ﭺ ” کا حرف ﮬﻮﺗﺎ ﮬﮯ ؟ بالکل نہیں ہوتا…….!!

ﺣﻀﻮﺭ نبی ﭘﺎﮎ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ﻧﮯ حدیث مبارکہ میں جو لفظ ادا کیا ہے – وہ ہے ” ﺻﯿﻦ ” کا لفظ جو زبان رسالت سے ادا کیا گیا ھے – ﯾﻌﻨﯽ ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮ – ﺗﻮ ” ﺻﯿﻦ ” ﺟﺎﻧﺎ – ﭘﺮ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ” ﺻﯿﻦ ” ﮐﺎ ﺗﺮﺟﻤﮧ آخر ” ﭼﯿﻦ ” ہی ﮐﯿﻮﮞ ﮐر دیا ؟ ﮐﯿﺎ ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﭼﯿﻦ ﮐﻮ ” ﺻﯿﻦ ” ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﻟﻐﺖ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﯿں – ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻠﮯ ﮔﺎ – ﮐﮧ ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ “ﭼﯿﻦ ” ﮐﻮ ” صین ” نہیں بلکہ ” ﻏﻀﻦ ” ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ۔

ﺍﺏ ﺫﺭﺍ ﻋﻘﻞ ﮐﮯ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﭘﺮ ﭘﺮﮐﮭﯿں – ﺟﻮ ﻋﻠﻢ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ یعنی رسالت مآب صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم ﮬﯿﮟ – کیا ﻭﮦ کہہ ﺭﮨﮯ ﮬﯿﮟ ؟ ﮐﮧ ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﮬﻮ – ﺗﻮ ﭼﯿﻦ ﺟﺎﻧﺎ ۔ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﮑﮧ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ ۔ ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ ۔ چین جانا ؟ ﺍﮔﺮ پیغمبر اکرم (ص) کو ﺩﻭﺭ دراز کے ﻣﻠﮏ ﮐﺎ ﺣﻮﺍﻟﮧ ﺩﮮ ﮐﺮ ہی ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﯽ ﮬﻮﺗﯽ – ﺗﻮ ﯾﻮﻧﺎﻥ ، ﺑﺮﻣﺎ ، اور کئی ملک ﭼﯿﻦ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﻭﺭ ﺗﮭﮯ ۔ ان میں سے بھی کسی ملک کا نام لیا جا سکتا تھا – آخر ﺗﺮﺟﻤﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﮯ ﭼﯿﻦ ہی ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮩﺎ ؟

ﺍﺏ ﺟﻮ ﮬﻢ ﻧﮯ ” ﻟﻐﺖ ﻋﺮﺏ ” ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﯽ – ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ – ﮐﮧ ﺟﻮ ﻋﺮﺏ ﮐﮯ ﺁﺝ ﻧﺌﮯ ﺷﮩﺮ ﮨﯿﮟ – ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺮﺍﻧﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﮯ ؟ ﺗﻮ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ – ﮐﮧ ﺁﺝ ﺟﺲ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ” ﻧﺠﻒ ” ﮬﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﻣﻘﺎﻡ ﮐﻮ ﻋﺮﺏ ﻭﺍﻟﮯ ” ﺻﯿﻦ ” ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ “ﮐﺮﺏ ﻭ ﺑﻼ ” ﮐﻮ ﭘﮩﻠﮯ ﻋﺮﺏ ﻭﺍﻟﮯ ” ﺑﺎﺑﻞ ﻭ ﻧﯿﻨﻮﺍ “
ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ۔ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺟﺎ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﺎ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﺳﻤﺠﮫ میں ﺁﯾﺎ ﮐﮧ :

اصل میں حدیث یہ ہے –
ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﮬﻮ – ﺗﻮ ” ﻧﺠﻒ ” ﺟﺎﻧﺎ –
ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﻧﺠﻒ ﮐﻞ ﺑﮭﯽ ﻋﻠﻢ ﮐﺎ ﻣﺮﮐﺰ ﺗﮭﺎ – ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﮬﮯ – ﺍﻭﺭ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﺗﮏ ﺭﮬﮯ ﮔﺎ – اور والیء نجف اشرف باب العلم مولائے کائنات علی ابن ابی طالب علیہ السلام آج بھی نجف اشرف میں دو انبیاء جناب آدم و نوح علیہم السلام کے عین درمیان میں آرام فرما ہیں –

ﯾﻌﻨﯽ اس ﺣﺪﯾﺚ ﮐﺎ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺍﺻﻞ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﮐﭽﮫ ﯾﻮﮞ ﮬﮯ ﮐﮧ :
ﻋﻠﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﮬﻮ ﺗﻮ – ” ﻧﺠﻒ ” ﺟﺎﻧﺎ – ﺍﮔﺮ ﻋﻠﻢ ﻟﯿﻨﮯ ﻧﮧ ﺑﮭﯽ ﺁﮰ – ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺳﻼﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﺁﺟﺎﻧﺎ – ﺍﻭﺭ ﻋﻠﻢ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﺎ – (اقتباس ماخوز از ڈاکٹر ضمیر اختر)

اور اسی عنوان پہ ایک مولا علی (ع) کا فرمان ، جو آپکی اپنے جنازہ کیلیئے وصیت ہے – اسمیں بھی ناقابل تردید ثبوت موجود ہے – حوالہ کیساتھ وہ بھی ملاحظہ فرمائیں : تاکہ ابہام دور ہو –

” مولا علی علیہ السلام نے اپنی اولاد کو وصیت کی : کہ میری شہادت کے بعد تم میرے جنازہ کو پشت کوفہ کیطرف لے جانا – اور راستے میں ایک مخصوص ہوا ملیگی – وہاں مجھے دفن کر دینا – اور وہ جگہ * طور سین * کا ابتدائی حصہ ہے – اور جناب حسنین علیہم السلام نے آپکی وصیت کے مطابق عمل کیا – (تہزیب الاحکام جلد 6 صفہہ 63) اس سے بھی معلوم ہوا – کہ نجف کو صین یا سین ہی بولا جاتا تھا –

ایک قابل زکر علمی نقطہ اور بھی ملاحظہ فرمائیں –
لغت میں علیء کے معنی ہیں : بلندی ………
وہ بلندی…….. جسکے اوپر کوئی اور بلندی نہ ہو –
علیء کعبہ میں آئے – کعبہ کے معنی بھی : بلندی ……
علیء نجف میں ہیں – نجف کے معنی بھی : بلندی …….
علیء مسجد سے سدھارے – مسجد کے معنی بھی : بلندی…..

اب بلندی کے وہ مقام بھی دیکھ لیں – کہ جب جب علی (ع) اتنے بلند ہوئے – کہ اوپر کوئی بلندی نہ رہی …….!!

دیکھو…..!! فتح مکہ پر –
جب علیء دوش رسول (ص) پہ بت شکن بنکر مہر نبوت (ص) کے سوار ہوئے – اور عرش کے کنگروں نے یدالہی ہاتھوں کے بوسے لیئے – کہ علیء کے اوپر کوئی بلندی نہ رہی –

اور پھر دیکھو………….!!
خم غدیر پر – جب علیء پیغمبر (ص) کے ھاتھوں پہ من کنت مولاہ فھزا علیء مولاہ کا لقب لینے کیلیئے جلوہ فگن ہوئے – اور پیغمبر (ص) نے اتنا بلند کیا – کہ اب علیء کے اوپر کوئی بلندی نہ رہی –

(ایک اور اھم نقطہ)
اللہ پاک نے قرآن پاک میں اپنے محبوب نبی (ص) اور محبوب نبی (ص) کے جسم مبارک کے ایک ایک عضو کی تعریف کی ہے – اور بشکل آیات مبارکہ قصیدے پڑھے ہیں – لیکن قرآن پاک میں ہی اپنے محبوب کے جسم اطہر کے دو عضو کو اپنے عضو قرار دیا –

ایک جگہ سورہ ء انفال میں نبی (ص) کے ھاتھوں کو اپنے ھاتھ قرار دیتے ہوئے فرماتا ہے کہ : وما رمیت از رمیت و لکن اللہ رما ……
اور یداللہ فوق ایدھم ……….. !!

اور دوسری جگہ اپنے محبوب کے کلام کو اپنا کلام یعنی آپ (ص) کی زبان کو اپنی زبان قرار دیتے ہوئے فرماتا ہے کہ : وما ینطق عن الھوی انھوا الا وحی یوحی ……

مثل مشہور ہے – کہ حکیم کا کوئی عمل بھی بغیر حکمت کے نہیں ہوتا – آپ نے کبھی سوچا ؟ کہ اللہ نے آخر اپنے محبوب کے مبارک جسم کے دو عضو کو ہی اپنی طرف نسبت کیوں دی ؟؟
فرمایا کہ…. …………………….
1- یہ ھاتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔ میرے ھاتھ ہیں –
2- یہ زبان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میری زبان ہے –

فقط اسلیئے کہ ……….. !!
جب میرا نبی (ص) میرے ولی علی (ع) کو ھاتھوں پہ اٹھائے – تو یہ نہ کہنا کہ نبی (ص) نے اٹھایا ہے – بلکہ کہنا کہ اللہ نے اٹھایا ہے – اور جب میرا نبی (ص) کہے کہ : من (ص) کنت مولاہ فھزا علی (ع) مولا – تب یہ نہ کہنا کہ نبی (ص) نے کہا ہے – بلکہ کہنا کہ اللہ نے کہا ہے –

سبہان اللہ – سبہان اللہ – سبہان اللہ –
وما علینا الاالبلاغ المبین –

ترتیب و تحریر :
سید فاخر حسین رضوی –

 

Ashraf Ali

Ek Band E Momin Ne Hazrat imam_E_Zamana (a.t.f.s.) Se Corona Virus Ki Bimaari Se Shifa K Liye imam se Tawassul Kiya.
Ek Nuraani Hasti Us Banda E Momin K Khuwab Me Aai Us Momin Ne Dekha K Wo Nuraani Hasti Logo Ko Masoor Ki Daal Taqseem Kar Rahi Hai.
Us Hasti Ne Farmaya K iss Daal Me Tum Logo K Liye Shifa Hai.

Aaima (a.s.) Farmate Hain K Masoor Ki Daal 70 Amraaz Me Shifa Deti Hai.

Rabbe Kareem Hazrat (a.t.f.s.) K Zahoor Me Tajeel Farma.
Aameen Ya Rabbal Aalaameen.

Facebook Comments