English Special

ek bahun jo widow ho gayin hain unke supurd yeh Nazm…

Majaaz Alig
===================
Main Apni ek khalazaad bahun jo widow ho gayin hain unke supurd yeh Nazm kerta hun ..Unke marhoom azeez shauhar ki taraf se jo aasmaan se yeh ruqa bhej rahe hain Apni ahlia ko unki 40th marriage anniversary per aaj 4thApril ko..
Bahut sanbhal ker likhi hai ke koi gustaakhi na ho jaaye..woh bahut azeez hain mujhe..
…Dostaan e azeezi hosla aur dua chaahunga …

Ek Nazm.. ایک نظم
(Aasmaan ka khat)

آسمان کا خط
______——-____———______
Oo, uss gaanv se aane waali fiza
Mujhe sirf tuu itna tau bata
Kis haal men hai mera sanum
Mujhper ker de tu bas itna karum,
Oo,uss gaanv se aane waali Fiza,
او اُس گاؤں سے آنے والی فضا
مجھے صرف تُو اتنا تو بتا
کس حال میں ہے میرا صنم
مجھپر کر دے تو بس اتنا کرم
او اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔
Kia ab bhi usmen mastana rawi jhalakti hai
Kia ab bhi woh waise hi meri rahen takti hai
کیا اب بھی اسمیں مستانہ روی جھلکتی ہے
کیا اب بھی وُہ ویسے ہی میری راہیں تکتی ہے
Kia ab bhi uss husn e shabistaan per
koi chaandni uoon sarakti hai,
Oo,uss Gaanv se aane waali Fiza,
کیا اب بھی اُس حسنِ شبستان پر
کوئی چاندنی یوں سرکتی ہے
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔

Woh des Jo hum se chuta hai
Woh Des hamara kaisa hai
Woh sab log mujhe yaad aate hain magar
Woh mera jaan se peyaara kaisa hai,
Oo, uss Gaanv se aane waali Fiza,
وُہ دیس جو ہم سے چھوٹا ہے
وُہ دیس ہمارا کیسا ہے
وُہ سب لوگ مجھے یاد آتے ہیں مگر
وُہ میرا جان سے پیارا کیسا ہے
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔
Kia ab bhi mera sanum wahaan aata hai,
Kia ab bhi woh geet suhane gàata hai,
Kia ab bhi uske chat per chaand mandlata hai
Kia ab bhi chaand uss se waise hi shirmata hai,
Oo,uss Gaanv se aane waali Fiza,
کیا اب بھی میرا صنم وہاں آتا ہے
کیا اب بھی وُہ گیت سہانے گا تا ہے
کیا اب بھی اُسکے چھت پر چاند منڈلاتا ہے
کیا اب بھی چاند اُس سے ویسے ہی شرماتا ہے
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔
Kia ab bhi mere sanum ke Gaanv men
Sirmast hawayen bahti hain
Kia ab bhi wahaan taare nikalte hain
Kia ab bhi safed chameli chatakti hai
کیا اب بھی میرے صنم کے گاؤں میں
سرمست ہوائیں بھتی ہیں
کیا اب بھی وہاں تارے نکلتے ہیں
کیا اب بھی سفید چمیلی چٹکتی ہے
Kia ab bhi woh masoom itfaal wahaan
Mere sanum ki aamad per uoon
Ghera baandhe rahte hain
کیا اب بھی وُہ معصوم اطفال وہاں
میرے صنم کی آمد پر
یوں گھیرا باندھے رہتے ہیں
Kia unki Masoom nigahon men
Mere sanum ka chehra rahta hai
Oo, uss Gaanv se aane waali Fiza,
کیا اُنکی معصوم نگاہوں میں
میرے صنم کا چہرہ رہتا ہے
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔
Sab khuch pucha main ne tujhse
Tumne na pucha ek baar bhi dard hamaara
Kia kahe gi tuu laut ker mere sanum se
Jaisa tha woh, waisa hai……??
سب کچھ پوچھا میں نے تجھسے
تمنے نہ پوچھا ایک بار بھی درد ہمارا
کیا کہے گی، تُو جاکر میرے صنم سے
جیسا تھا وُہ، ویسا ہے۔۔۔۔۔۔
Oo,uss Gaanv se aane waali Fiza,
Mujhe sirf tuu itna bata
Kis haal men hai mera sanum
Mujhper kar de tu bas itna karum,
Oo, uss Gaanv se aane waali Fiza …………!!
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا
مجھے صرف تُو اتنا بتا
کِس حال میں ہے میرا صنم
مجھ پر کر دے تُو بس اتنا کرم
او، اُس گاؤں سے آنے والی فضا۔۔۔!!
Self n extempore written

Dr.Abdullah khan
( Majaaz Alig)
04-04-2021@03:52 am,
Abu Dhabi,UAE
00971-552231772.

Facebook Comments